Jun 8, 2021

Invisible Eyes See - نادیدہ آنکھیں دیکھتی ہیں

Coming to the street corner house, he has installed a number of CCTV cameras. It covers the whole street scene; there is a small security guard. Very important! That every person entering the street can be monitored; who, when, why, from which side, in what manner, for how long he came here, stopped, and when, from which side, in what condition he came out. .? However, I have a strange case. Even though we are old here, and the people of the particular house with the camera (very nice and decent people) know us very well, the presence of the camera is sometimes disturbing.

نادیدہ آنکھیں دیکھتی ہیں

گلی کی نکڑ والے گھر انے نے ایک عدد CCTV کیمرہ نصب کر رکھا ہے۔ یہ پوری گلی کے منظر کو کَور کرتا ہے ــــــ ننّھا سا سیکیورٹی گارڈ ہے۔ بہت ضروری ہے! کہ گلی میں وارد ہوئے ہر شخص پر نظر رکھی جا سکتی ہے ـــــــ کون، کب، کیوں، کس طرف سے، کس انداز میں، کتنی دیر کے لیے یہاں آیا، رُکا، اور کب، کس طرف سے، کس حالت میں نکلا ۔۔۔؟

تاہم، میرے ساتھ ایک عجیب معاملہ ہے۔

اگرچہ یہاں ہم پرانے ہیں، اور کیمرے والے مخصوص گھر کے افراد (بہت عمدہ و شریف لوگ) ہمیں خوب اچھی طرح سے جانتے ہیں، بوجوہ کیمرہ کی موجودی بعض اوقات مضطرب کرتی ہے:

جب جب میرے ہاتھ میں تسبیح ہوتی ہے تو خیال آتا ہے کیمرہ کے عقب میں چھپی آنکھ یہ نہ خیال کر لے کہ میں نیک ہونے کی نمائش کر رہا ہوں۔ یہی احساس مسجد کی طرف جاتے سمے تکلیف دیتا ہے ۔۔۔ پھر،کبھی اُس نکڑ پر کسی وجہ سے چند منٹوں کے لیے کھڑا ہونا پڑ جائے، تب دل میں یہ چور کھٹکتا ہے کہ نجانے دیکھنے والی آنکھ کیا سمجھ بیٹھے؟! ۔۔۔ میں ہڑبڑا سا جاتا ہوں، اورجلدی سے ہٹ جاتا ہوں۔

دیکھا جائے تو' نادیدہ کیمرے والی دو آنکھیں' بھی یہی کام کر رہی ہیں۔ اور ایسی بےچینی اور اضطراب صرف اُنہی کے لیے روا ہے۔

بِن دیکھے خدا نے ایسے احساس، اضطراب، خوف، اور محبت میں برتے ہر معمولی عمل کے بدلے سحر انگیز مناظر اور سہولیات سے لدی بہشتیں بنا رکھی ہیں۔ ہماری ہر سوچ، نیت، اور عمل اُن ستاروں، سیاروں کی رعنائیوں میں یا تو اضافہ کر دیتے ہیں یا اُنہیں بھیانک بنا ڈالتے ہیں۔

ایک حدیثِ مبارکہ چونکا دینے والی ہے۔ کہا، وہاں جنّتی اپنے سے اوپری رَینک والوں کو دیکھ دیکھ حسرت سے کہا کریں گے کہ کاش ہم نے فلاں نماز میں سُستی نہ برتی ہوتی، فلاں نماز ترک نہ کی ہوتی ۔۔۔ دیکھیں، انصاف بھی یہی ہے! ۔۔۔ ایک شخص بِن دیکھے خدا کی ہمہ دم دیکھتی نادیدہ آنکھوں کا خیال کر کے منہ اندھیرے بستر سے اُٹھتا ہے، وضو بنا کر اُس کے حضور سجدہ ریز ہو جاتا اور رَبّنا لَا تُواخِذنَا اِنّسینَا اَو اَخطَانا کی گڑگڑاہٹ اُس کے حضور پیش کرتا ہے ــــــ بِن دیکھے خدا کو ۔۔۔ !! تو خدا کس قدر محظوظ ہوتا گا، کس قدر!! ۔۔۔ یا ایسے دکاندار سے جو ایک اَن پڑھ، جاہل کسٹمر کو expired آئیٹم اِس لیے دینے سے گریزاں ہے کہ بِن دیکھے خدا کی نادیدہ آنکھیں دیکھتی ہیں۔

جیتے جی اِقرار بالّلسان وتصدیق بالقلب والے اخلاص کے ساتھ خدا کی موجودی اور اُس کے بڑے پن کا اقرار کر جانا اِس بات کی ٹکٹ ہے کہ آپ جہنّم کا ایندھن نہیں بن سکتے۔ حدیثِ مبارکہ موجود ہے۔ اللہ کے رسولؐ نے اِس بات کا categorically اظہار کر رکھا ہے کہ جس کسی نے خلوصِ دل سے کلمہ پڑھا، پھر اُسی ایمان پر جان دی، وہ جہنّم سے خلاصی پا گیا۔ تاہم، قرض شہید کو بھی معاف نہیں۔ اِس دنیا میں ادا نہ ہوا تو بدلے میں نیکیاں وصول کی جائیں گی، اور اُس روز نیکیاں دینا بڑا بھاری پڑے گا۔ کیوں؟ وہاں کئی برسوں پر محیط طویل دورانیے حائل ہیں جنّت میں قدم رکھنے کو۔ خواری ہے! ۔۔۔ جس شخص کے معاملات یہاں smooth ہیں، اُس کے لیے جنّت میں داخلہ بھی smooth یعنی بےروک ٹوک ہے۔ ورنہ ٹیڑھے میڑھے راستے اور بھوک پیاس سے لبریز کمر شکن delays ہیں۔

یہ سازوسامان ہمیں تھما کر، اپنی Will برتنے کا فریبی اختیار سونپ کر، خاموش مگر وَیری پَاورفُل خدا کی نادیدہ آنکھیں ہمیں دیکھتی ہیں۔ کبھی افسردہ و اشکبار تو کبھی فرطِ مسرّت میں سرشار۔

زندگی آڈیو کیسٹ والی رِیل کی طرح چل کر ختم ہو جاتی ہے۔

چھ فٹ قبر اُوپر سائیں سائیں کرتی ہوائیں سرگوشیاں کرتی ہیں: کہاں ہے وہ مال و متاع، وہ کرّو فر، وہ ناز و نخرے، وہ جولانیاں، رعنائیاں، تمہاری سب vanities ۔۔۔؟

نادیدہ آنکھیں دیکھتی ہیں ۔۔۔ بِن دیکھے خدا کے احساس میں اُٹھ کر بہ صد حُسنِ نیت خیر کے کسی کام کے لیے فکر مند ہونا، متحرّک ہونا اور متحرّک رہنا ۔۔۔ بڑی بات ہے صاحب۔ بڑی بات! 

Post a Comment